جیت کر آئیں گے، آسٹریلیا میں کھیلنا چیلنج ہے ، صائم ایوب

راولپنڈی کے ٹرینگ سیشن کے چوتھے اور آخری روز پاکستانی کرکٹ ٹیم کے اسکواڈ نے سناریو میچ کے دوسرے و آخری دن پریکٹس کی۔ سیشن کے اختتام پر پاکستان کرکٹ ٹیم کے نوجوان بیٹسمین صائم ایوب جو ٹیسٹ میچز کے لیے اسکواڈ میں ڈیبیو کریں گے، کا پریس کانفرنس میں کہنا تھا کہ ہمیشہ سے کوشش رہتی ہے کہ جب بھی موقع ملے تو ٹیم کے لیے میچ ونر ثابت ہوں۔

انہوں نے کہا کہ آسڑیلیا ٹور کے لیے تیاریاں بھی بہت زوروں سے جاری ہیں ،وہیں چیزیں  ذہن میں ہیں جو آسڑیلیا میں ہمارے کام آنی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میچ کھیلتے ہوئے اپروچ مثبت رہنی چاہیے،  بعض اوقات میچ میں صورتحال کے مطابق کھیلنا پڑتا ہے اور میچز میں مومنٹم اوپر نیچے ہوتا رہتا ہے۔

نوجوان بیٹر نے کہا کہ کبھی صورتحال بیٹسمین کے حق میں ہوتی ہے اور کبھی بولر کے حق میں ، اس لحاظ سے کھلاڑی کو ایڈجسٹ کرنا پڑتا ہے، ایسا نہیں ہوتا کہ آپ نے پہلے سوچ لیا کہ تیز کھیلنا ہے تو میدان میں بھی تیز ہی کھیلیں، یہ صورتحال پر منحصر ہوتا ہے۔

صائم ایوب کا کہنا تھا کہ میرا ماننا ہے کھیل میں آسانیاں و مشکلات کھلاڑی اپنے لیے خود پیدا کرتا ہے، اگر بحثیت ٹیم ہم اچھی تیاری کر کے جاتے ہیں تو ایسی کوئی وجہ نہیں پروفامنس نہ  دے سکیں،  انشاءاللہ اچھے رزلٹ دیں گے،  پریکٹس سیشن میں اچھی محنت کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ آسڑیلیا میں پہلے نہیں کھیلا لیکن وہاں کی کرکٹ جس حد تک دیکھی  ہے وہاں تیز وکٹیں ہیں لیکن تیسرے چوتھے دن بال سلو بھی آتا ہے۔ اسی لحاظ سے ہم نے پریکٹس کی ہے۔

صائم ایوب کا کہنا تھا کہ میں کرکٹ کا اسپشلسٹ بننا چاہتا ہوں کسی ایک فارمیٹ کا نہیں،  تینوں فارمیٹ ذہن میں رہتے ہیں اور جو صورتحال کے مطابق چاہیے ہوتا  ہے اس فارمیٹ میں پرفارم کرتا ہوں۔

اس سوال کے جواب میں کہ ٹی ٹونٹی میں آپ نے کہا تھا کہ خود اپنا آئیڈیل ہوں، ٹیسٹ کرکٹ میں آئیڈیل کون ہے، صائم ایوب کا کہنا تھا کہ میں نے یہ نہیں کہا تھا کہ میں خود اپنا آئیڈیل ہوں بلکہ یہ کہا تھا کہ میں اپنی پہچان اسی طرح بنانا چاہتا ہوں جس طرح لیجنڈ ہیں جو میری ایج میں تھے، یہ کہا تھا کہ میں بھی ان کی طرح بن سکتا ہوں۔

نوجوان بلے باز نے کہا  کہ انسان سب سے سیکھتا ہے لیکن   میری کوشش ہوتی ہے کہ اپنا کوچ خود بنوں اور جو چیزیں مجھے اچھا کھلاڑی بنائیں گی انھیں میں اپناؤں۔

صائم ایوب نے پسندیدہ کھلاڑی سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں کہا کہ ان کے بہت  سے پسندیدہ کھلاڑی ہیں کسی کا نام نہیں لے سکتا کیوں کہ پھر دوسرے کھلاڑی برا مان سکتے ہیں۔

صائم ایوب کا کہناتھا کہ آسڑیلیا میں کرکٹ کھیلنے کا زیادہ مزہ آتا ہے کیونکہ جب آپ اپنے کمفرٹ زون سے باہر نکلتے ہیں تو آپ کو چیلنج ملتا ہے، اور جب چیلنج ملتا ہے تو اس میں گروتھ بھی ہوتی ہے، نفیساتی طور پر بھی آسڑیلیا میں کھیلنے کے لیے بہت زیادہ پرجوش ہوں انشاءاللہ سیریز جیتں گے۔

دورہ اسڑیلیا سے قبل راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم میں جاری پاکستان کرکٹ ٹیم کے تریبتی کیمیپ کا راولپنڈی میں چار روزہ سیشن اختتام پذیر ہوگیا، ٹیم آج لاہور روانہ ہوگی جہاں ایک دن کے آرام کے بعد دو روز تک پریکٹس  کرے گی اور پھر آسڑیلیا روانہ ہوجائے گی۔

Facebook
Twitter
LinkedIn
Pinterest
Pocket
WhatsApp

متعلقہ خبریں

Start a Conversation

Your email address will not be published. Required fields are marked *

حالیہ خبریں